Here is what others are reading about!

جنت سے آیا ہوا ایک خط

السلام و علیکم
ہاں میں ہوں شیخ باقر النمر۔۔۔
میری کچھ غلطیاں ہیں جو میں آپ کو بتانا چاہتا ہوں۔
میری پہلی غلطی یہ ہے کہ میں نے مظلوم کی حمایت کی، اور ان کے حق میں آواز بلند کی۔
میری دوسری غلطی یہ ہے کہ میں نے مظلوموں کی حمایت میں ریلیاں نکالئیں۔
میری تیسری غلطی یہ کے میں ایک ایسے ملک کا باسی ہوں جہاں موروثی سیاست ہوتی ہے۔
جی ہاں وہی سیاست جس میں پہلے باپ، پھر اس کا بیٹا اور پھر اس کا بیٹا ملک سنبھالاتا ہے۔
میری چوتھی غلطی یہ کہ میرا یک ایسے فرقے سے تعلق ہے جس کو اِس ملک میں کافر سمجھا جاتا ہے۔
میری پانچویں غلطی یہ کہ میں نے کبھی ظالم کے آگے جھکنا نہیں سیکھا۔
میری چھٹی غلطی یہ ہے کہ میں عام ملاوٗں کی طر ح کبھی دنیا کی مال و دولت کے آگے نہیں جھکا۔
میری ساتویں غلطی یہ ہے کہ میں نے ہمیشہ اللہ تعالیٰ، اسکے رسول ﷺ اور اہلییتؑ کے بتائے ہوئے کام کئے۔
میری آٹھویں غلطی میں نے زندگی میں کبھی وہ کام نہیں کیا جس کی اللہ اور اس کے رسول ﷺنے مخالفت کی ہو۔
میری نویں غلطی یہ کہ میں نے ہمیشہ داعش، القائدہ ، بوکو حرام اور اس جیسی دیگرد ہشتگرد جماعتوں کی مخالفت کی۔
میری دسویں غلطی یہ کہ میں کبھی اپنے ملک کی جانب سے دی جانے والی دھمکیوں سے ڈر کر چپ نہیں ہوا۔
یہ ہیں میری وہ غلطیاں جو حکومتِ وقت کے لئے شاید بے چینی کا سبب بن رہی تھیں۔یا وہ چاہتے ہی نہیں تھے کہ ان کے ملک کے خلاف کوئی اٹھے اور مظلوم کا ساتھ دے اور ظالم کی مخالفت کرے، شاید وہ چاہتے ہی نہیں تھے کہ کوئی ان کے ملک میں ان کی موروثی سیاست کے خلاف آواز بلند کرے جس کے ذریعے مظلوموں کو کچلا جا رہا ہے۔ شاید  وہ یہ چاہتے ہی نہیں تھے کہ ان کی بادشاہت کے آگے کوئی ان کے غلط کاموں کا تذکرہ کرے، شاید وہ یہ چاہتے ہی نہیں تھے کہ ان کی حمایت یافتہ داعش اور دیگر تنظیموں، جن کی یہ مسلسل حمایت و نصرت کرتے ہیں،کے بارے میں کوئی ایک لفظ بھی بولے۔
اب جب کے مجھ سے اتنی ساری غلطیاں ہو ہی گئیں ہیں تو ان کے (جس ملک میں میں رہتا ہوں) قانون کے مطابق مجھے جینے کا کوئی حق نہیں ہے۔ کیوں کے میں نے اتنی ساری غلطیاں جو کی ہیں۔
ہاں ایک بات یاد رکھئے گا کہ میں نے کبھی کوئی نشے کی چیز اسمگل نہیں کی، میں کبھی اونٹ کی دوڑ میں شریک نہیں ہوا ، جس میں معصوم بچوں کو اونٹ پر باندھ کے دوڑایا جاتا ہے ، میں نے تیل کے پیسوں سے ہالینڈ اور لندن میں عیاشیاں نہیں کئیں ، میں نے سونے اور ہیرے کی گاڑیاں نہیں بنوائیں، میں نے کبھی کسی کا قتل نہیں کیا، میں نے کبھی کسی کی ناموس کا پامال نہیں کیا۔
تو جب یہ کام نہیں کئے اور زندگی بھر غلطیاں ہی کئیں تو پھر مجھے تو شہید ہونا ہی تھا اور وہی ہوا جس کا میں منتظر تھا 2جنوری کو میری انہی غلطیوں کی بناء پر جو میں نے بتائیں، میرا سر قلم کر دیا گیا۔
ہاں بات ختم کرنے سے پہلے سنتے جائیں میں اس وقت جہاں ہوں وہاں مجھے آکے پتہ چل گیا کہ میری ان غلطیوں کا مجھے کیا ثمر ملا ہے۔ شاید میں جن کو غلطیاں سمجھتا تھا وہ ہی وہ کام ہیں جن کو کرنامیرے اس گھر اور ہمیشہ قائم و دائم رہنے والی دنیا کے لئے بہترین تھا جہاں میں اب آگیا ہوں۔ 
ظالم اپنی عیاشیاوں میں مست ہے لیکن خونِ نا حق کبھی نہیں چھپتا۔میرا خون بھی ضرور رنگ لائے گا۔
والسلام
آپ کا اپنا 
شہید شیخ باقر النمر

(Visited 1,566 times, 1 visits today)

Syed Oun Abbas Jafferi is social media activist and a freelance writer based in Karachi. He’s coordinating Bazmay Talaba at FM93 Karachi.

One Comment

Leave a Reply

Got It!

اس ویب سائٹ کا مواد بول پلاٹون کی آفیشل رائے کی عکاسی نہیں کرتا. مضامین میں ظاہر معلومات اور خیالات کی ذمہ داری مکمل طور پر اس کے مصنف کی ہے