Here is what others are reading about!

  • Home
  • /
  • Author: Mahnoor Naseer

نیلی آنکھیں اور کڑک چائے

حُسن  کو  دیکھنے  والی  نظر  کی  بس  دیر   ہے جو نہ تولے  اِسے ا’س کے چاروں اُور اندھیر ھے ذرا جو دل کی آنکھ سے دیکھیں تو چاروں طرف کسی نہ کسی ڈھکے چھپے کونے میں ایک ارشد خان چُھپا بیٹھا ہے۔۔۔ وہ فُٹ پاتھ پہ چادر میں منہ لپیٹے بیٹھا بھنگی بابا۔ کیا معلوم…

دھرتی کا نوحہ

اے!  راہِ حق کے شہیدو وفا کی تصویرو تمھیں وطن کی ہوائیں سلام کہتی ہیں 70 سال پرانا ریڈیو آج بھی پوری شان کے ساتھ یہ نغمہ بجا رہا ہے۔ جس بابے کا ریڈیو ہے اسکی بھی مجھے سمجھ نہیں آتی ارے! بھلا اسے کسی میز پر رکھ چھوڑے تو میرے سر پہ ان نغموں…

داستان کشمیر

گزرے وقتوں کا قصّہ ہے کہیں پر ایک نہایت حسین اور خوبصورت باغ ہوا کرتا تھا۔ وہ باغ اپنے قدرتی حُسن کی وجہ سے مشہورِ زمانہ تھا اور اُس کا نام بھی ویسا ہی سہانہ تھا۔ “کشمیر”، جنت نظیر۔  ایسا خوبصورت کہ شاعر اس پر شاعری کرتے اور کنواریاں اس کی خوبصورتی پر نغمے گنگناتیں اور…

ادھوری ذات

ڈھول کی تھاپ پر رقص کرنے والے عادی مِراثی، اپنی شناخت سے محروم چند جسم ، معاشرے سے دُھتکارے ہوئے کچھ لوگ ، خدا کی مَنحوس مخلوق ، قوم کے اوپر ایک عذاب ۔۔۔ جانے کیا کیا سنْنا باقی تھا اسے اپنی زندگی میں۔قصور وہ بھی نہیں جانتی تھی۔۔۔ جانتی تھی یا جانتا تھا ؟…

Got It!

اس ویب سائٹ کا مواد بول پلاٹون کی آفیشل رائے کی عکاسی نہیں کرتا. مضامین میں ظاہر معلومات اور خیالات کی ذمہ داری مکمل طور پر اس کے مصنف کی ہے